Question Answers

Compiled by Khatim-ul-Ambia University (Hausary Madressa) Karachi


701

Category : نماز

Question : نماز کے دوران کسی کو شک ہوجائے کہ دوسری رکعت پڑھ رہا ہے یا تیسری رکعت تو اس کی کیا ذمہ داری ہے ؟


Answer-1: اگر نماز میں دوسرے سجدے میں جانے کے بعد شک کرے کہ دوسری رکعت پڑھی ہے یا تیسری رکعت تو تیسری رکعت سمجھ کر نماز مکمل کرے اور نماز کے بعد کھڑے ہوکر ایک رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:235 | volume:0


Answer-2: اگر نماز مٰں دوسرے سجدے سے سر اُٹھانے کے بعد شک ہو کہ دوسری رکعت پڑھی ہے یا تیسری رکعت تو تیسری رکعت سمجھ کر نماز مکمل کرے اور نماز کے بعد کھڑے ہو کر ایک رکعت یا بیٹھ کر دو رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:190 | volume:0


Answer-3: اگر نماز میں دوسرے سجدے کا ذکر مکمل کر نے کے بعد شک کرے کہ دوسری رکعت پڑھی ہے یا تیسری رکعت تو تیسری رکعت سمجھ کر نماز مکمل کرے اور نماز کے بعد کھڑے ہو کر ایک رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:209 | volume:0


Answer-4: اگر نماز میں دوسرے سجدے کا واجب ذکر مکمل کرنے کے بعد شک کرے کہ دوسری رکعت پڑھی ہے یا تیسری رکعت تو تیسری رکعت سمجھ کر نماز مکمل کرے اور نماز کے بعد کھڑے ہو کر ایک رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:218 | volume:0



702

Category : نماز

Question : نماز میں کسی قسم کا بھی شک پیش آنے کی صورت میں کیا نماز کو توڑ کر دوبارہ شروع سے پڑھنا جائز ہے ؟


Answer-1: اگر نماز میں صحیح شک میں سے کوئی شک پیش آجائے اور وقت وسیع ہو تو نماز کو توڑ کر دوبارہ پڑھنا جائز ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:237 | volume:0


Answer-2: اگر نماز میں صحیح شک میں سے کوئی شک پیش آجائے تو نماز توڑنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:191 | volume:0


Answer-3: اگر نماز میں صحیح شک میں سے کوئی شک پیش آجائے تو احتیاط واجب کی بناء پر نماز توڑ نا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:210 | volume:0


Answer-4: اگر نماز میں صحیح شک میں سے کوئی شک پیش آجائے تو نماز توڑنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:219 | volume:0



703

Category : نماز

Question : اگر نماز میں قیام کی حالت میں شک ہوجائے کہ تیسری رکعت ہے یا پانچویں رکعت تو نماز کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: اگر نماز میں قیام کی حالت میں شک ہوجائے کہ تیسری رکعت ہے پانچویں رکعت تو بیٹھ کر تشھد و سلام پڑھے اور پھر کھڑے ہوکر دو رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:236 | volume:0


Answer-2: اگر نماز میں قیام کی حالت میں شک ہوجائے کہ تیسری رکعت ہے پانچویں رکعت تو بیٹھ کر تشھد و سلام پڑھے اور پھر کھڑے ہوکر دو رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:190 | volume:0


Answer-3: اگر نماز میں قیام کی حالت میں شک ہوجائے کہ تیسری رکعت ہے پانچویں رکعت تو بیٹھ کر تشھد و سلام پڑھے اور پھر کھڑے ہوکر دو رکعت نماز احتیاط ادا کرے اور احتیاط واجب کی بناء پر دو سجدہ سہو اضافی قیام کے لئے انجام دے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:210 | volume:0


Answer-4: اگر نماز میں قیام کی حالت میں شک ہوجائے کہ تیسری رکعت ہے پانچویں رکعت تو بیٹھ کر تشھد و سلام پڑھے اور پھر کھڑے ہوکر دو رکعت نماز احتیاط ادا کرے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:219 | volume:0



704

Category : نکاح

Question : اگر عورت عقد میں شوہر پر شرط کرے کہ شہر سے باہر نہیں لے جائے گا تو کیا حکم ہے ؟


Answer-1: اگر عورت عقد میں شوہر پر شرط کرے کہ شہر سے باہر نہیں لے جائے گا اور شو ہر قبول بھی کرے تو بیوی کو اسکی رضایت کے بغیر شہر سے باہر نہیں لے جا سکتا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:474 | volume:0


Answer-2: اگر عورت عقد میں شوہر پر شرط کرے کہ شہر سے باہر نہیں لے جائے گا اور شو ہر قبول بھی کرے تو بیوی کو اسکی رضایت کے بغیر شہر سے باہر نہیں لے جا سکتا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:386 | volume:0


Answer-3: اگر عورت عقد میں شوہر پر شرط کرے کہ شہر سے باہر نہیں لے جائے گا اور شو ہر قبول بھی کرے تو بیوی کو اسکی رضایت کے بغیر شہر سے باہر نہیں لے جا سکتا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:438 | volume:0


Answer-4: اگر عورت عقد میں شوہر پر شرط کرے کہ شہر سے باہر نہیں لے جائے گا اور شو ہر قبول بھی کرے تو بیوی کو اسکی رضایت کے بغیر شہر سے باہر نہیں لے جا سکتا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:474 | volume:0



705

Category : جماعت

Question : آیا رمضان المبارک کی شبانہ نوافل کو جماعت سے پڑھ سکتے ہیں ؟


Answer-1: رمضان المبارک میں شبانہ نوافل کو احتیاط کی بناء پر جماعت سے نہیں پڑھ سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:270 | volume:0


Answer-2: رمضان المبارک میں شبانہ نوافل کو جماعت سے نہیں پڑھ سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:219 | volume:0


Answer-3: رمضان المبارک میں شبانہ نوافل کو جماعت سے نہیں پڑھ سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:245 | volume:0


Answer-4: رمضان المبارک میں شبانہ نوافل کو جماعت سے نہیں پڑھ سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:252 | volume:0



706

Category : نگاہ

Question : خواتین کے بالوں کو دیکھنے کا کیا حکم ہے؟


Answer-1: مرد کا نامحرم خاتون جو بے باک نہ ہو کے بالوں کو دیکھنا حرام ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:470 | volume:0


Answer-2: مرد کا نامحرم مسلمان خاتون کے بالوں کو دیکھنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:تحریر الوسیلہ | Page:217 | volume:2


Answer-3: مرد کا نامحرم مسلمان خاتون جو بے باک نہ ہو کے بالوں کو دیکھنا حرام ہے۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:منھاج الصالحین | Page:293 | volume:3


Answer-4: مرد کا نامحرم مسلمان خاتون جو بے باک نہ ہو کے بالوں کو دیکھنا حرام ہے۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:منھاج الصالحین | Page:293 | volume:3



707

Category : امانت

Question : اگر پیسے امانت میں رکھے ہوں اور وہ تلف یا ضایع ہوجا ئے تو ذمّہ دار ہوگیا ؟


Answer-1: اگر امانت کی حفاظت میں کوتاہی نہیں کی تو ضامن و ذمّہ دار نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:451 | volume:0


Answer-2: اگر امانت کی حفاظت میں کوتاہی نہیں کی تو ضامن و ذمّہ دار نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:369 | volume:0


Answer-3: اگر امانت کی حفاظت میں کوتاہی نہیں کی تو ضامن و ذمّہ دار نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:417 | volume:0


Answer-4: اگر امانت کی حفاظت میں کوتاہی نہیں کی تو ضامن و ذمّہ دار نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:448 | volume:0



708

Category : روزہ

Question : روزے میں سوئمنگ کرنے کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: روزے میں سوئمنگ کرنےمیں کو ئی حرج نہیں ہے البتہ پورا سر ڈبو نا شدید مکروہ ہے۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:301 | volume:0


Answer-2: اگر روزے دار جان بوجھ کر سوئمنگ کے دوران پورا سر پانی میں ڈبو دے تو احتیاط واجب کی بناء پر اس روزے کی قضاء کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:245 | volume:0


Answer-3: اگر روزے دار جان بوجھ کر سوئمنگ کے دوران پورا سر پانی میں ڈبو دے تو اسکا روزہ باطل ہوجائے گا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:276 | volume:0


Answer-4: اگر روزے دار جان بوجھ کر سوئمنگ کے دوران پورا سر پانی میں ڈبو دے تو اسکا روزہ باطل ہوجائے گا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:284 | volume:0



709

Category : روزہ

Question : اگر روزے میں ڈکار لے اور کوئی چیز منہ میں آجائے اور اسکو نگل لے تو کیا حکم ہے ؟


Answer-1: اگر روزے میں ڈکار لے اور کوئی چیز منہ میں آجائے تو اسکو باہر نکال دے لیکن اگر بے اختیار نگل لے تو کوئی حرج نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:305 | volume:0


Answer-2: اگر روزے میں ڈکار لے اور بے اختیار کوئی چیز منہ میں آجائے تو اسکو باہر نکال دے لیکن اگر بے اختیار نگل لے تو کوئی حرج نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:251 | volume:0


Answer-3: اگر روزے میں ڈکار لے اور کوئی چیز منہ میں آجائے تو اسکو باہر نکال دے لیکن اگر بے اختیار نگل لے تو کوئی حرج نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:282 | volume:0


Answer-4: اگر روزے میں ڈکار لے اور کوئی چیز منہ میں آجائے تو اسکو باہر نکال دے لیکن اگر بے اختیار نگل لے تو کوئی حرج نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:289 | volume:0



710

Category : روزہ

Question : آیا بڑھاپے کی وجہ سے روزہ چھوڑا جا سکتا ہے ؟


Answer-1: جو بڑھاپے کی وجہ سے روزہ نہیں رکھ سکتا اس پر روزہ واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:318 | volume:0


Answer-2: جو بڑھاپے کی وجہ سے روزہ نہیں رکھ سکتا اس پر روزہ واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:261 | volume:0


Answer-3: جو بڑھاپے کی وجہ سے روزہ نہیں رکھ سکتا اس پر روزہ واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:295 | volume:0


Answer-4: جو بڑھاپے کی وجہ سے روزہ نہیں رکھ سکتا اس پر روزہ واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:300 | volume:0



711

Category : روزہ

Question : جو بوڑھا ہو اور روزہ رکھنا اسکے لئے مشقت ہو تو کیا حکم ہے ؟


Answer-1: جو بوڑھا ہو اور روزہ رکھنا اس کے لئے مشقت ہو تو اس پر روزہ واجب نہیں لیکن ہر روزے کے بدلے ایک مدّ طعام فقیر کو دے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:318 | volume:0


Answer-2: جو بوڑھا ہو اور روزہ رکھنا اس کے لئے مشقت ہو تو اس پر روزہ واجب نہیں لیکن ہر روزے کے بدلے ایک مدّ طعام فقیر کو دے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:261 | volume:0


Answer-3: جو بوڑھا ہو اور روزہ رکھنا اس کے لئے مشقت ہو تو اس پر روزہ واجب نہیں لیکن ہر روزے کے بدلے ایک مدّ طعام فقیر کو دے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:295 | volume:0


Answer-4: جو بوڑھا ہو اور روزہ رکھنا اس کے لئے مشقت ہو تو اس پر روزہ واجب نہیں لیکن ہر روزے کے بدلے ایک مدّ طعام فقیر کو دے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:300 | volume:0



712

Category : روزہ

Question : جس نے بڑھاپے کی وجہ سے روزے نہیں رکھے تھے آیا اس پر قضاء واجب ہے ؟


Answer-1: جس نے بڑھاپے کی وجہ سے روزے نہ رکھے ہوں اگر ماہ رمضان کے بعد روزے رکھ سکتا ہو تو احتیاط مستحب ہے قضاء کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:318 | volume:0


Answer-2: جس نے بڑھاپے کی وجہ سے روزے نہ رکھے ہوں اگر ماہ رمضان کے بعد روزے رکھ سکتا ہو تو احتیاط واجب کی بناء پر قضاء واجب ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:261 | volume:0


Answer-3: جس نے بڑھاپے کی وجہ سے روزے نہ رکھے ہوں اگر ماہ رمضان کے بعد روزے رکھ سکتا ہو تو احتیاط مستحب ہے قضاء کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:295 | volume:0


Answer-4: جس نے بڑھاپے کی وجہ سے روزہ نہیں رکھا اگرچہ ماہ رمضان کے بعد روزے رکھ سکتا ہو تب بھی قضاء واجب نہیں ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:301 | volume:0



713

Category : روزہ

Question : افطار کا وقت کب ہوتا ہے ؟


Answer-1: اگر غروب آفتاب کا شک نہ بھی ہو تو بھی احتیاط واجب کی بناء پر جب تک مغرب کی طرف سے نکلنے والی سُرخی سر کے اُوپر سے گزر نہ جائے افطار نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:147 | volume:0


Answer-2: جب تک مغرب کی طرف سے نکلنے والی سُرخی ختم نہ ہوجائے افطار نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:117 | volume:0


Answer-3: احتیاط واجب کی بنا ء پر جب تک مغرب کی طرف سے نکلنے والی سُرخی سر کے اُوپر سے گذر نہ جائے افطار نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:131 | volume:0


Answer-4: احتیاط واجب کی بنا ء پر جب تک مغرب کی طرف سے نکلنے والی سُرخی سر کے اُوپر سے گذر نہ جائے افطار نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:137 | volume:0



714

Category : روزہ

Question : اگر روزے دار دن میں محتلم ہوجائے تو فوراً غسل کرنا ضروری ہے ؟


Answer-1: اگر روزے دار دن میں محتلم ہوجائے تو فوراً غسل کرنا واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:303 | volume:0


Answer-2: اگر روزے دار دن میں محتلم ہوجائے تو فوراً غسل کرنا واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:248 | volume:0


Answer-3: اگر روزے دار دن میں محتلم ہوجائے تو فوراً غسل کرنا واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:279 | volume:0


Answer-4: اگر روزے دار دن میں محتلم ہوجائے تو فوراً غسل کرنا واجب نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:287 | volume:0



715

Category : روزہ

Question : روزے میں لکڑی کو دھو کر اس سے مسواک کرنے کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: روزے میں گیلی لکڑی سے مسواک کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:307 | volume:0


Answer-2: روزے میں گیلی لکڑی سے مسواک کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:252 | volume:0


Answer-3: روزے میں گیلی لکڑی سے مسواک کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:283 | volume:0


Answer-4: روزے میں گیلی لکڑی سے مسواک کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:290 | volume:0



716

Category : روزہ

Question : جو حدیث گڑھی گئی ہو اسکو روزے کی حالت میں بیان کرنے کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: روزے کی حالت میں من گھڑھت حدیث ، اگر گھڑنے والے کی نسبت کیساتھ نقل کی جائے تو کوئی حرج نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:300 | volume:0


Answer-2: روزے کی حالت میں من گھڑھت حدیث ، اگر گھڑنے والے کی نسبت کیساتھ نقل کی جائے تو کوئی حرج نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:244 | volume:0


Answer-3: روزے کی حالت میں من گھڑھت حدیث ، اگر گھڑنے والے کی نسبت کیساتھ نقل کی جائے تو کوئی حرج نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:275 | volume:0


Answer-4: روزے کی حالت میں من گھڑھت حدیث ، اگر گھڑنے والے کی نسبت کیساتھ نقل کی جائے تو کوئی حرج نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:283 | volume:0



717

Category : روزہ

Question : روزے سے بچنے کے لئے سفر کرنے کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: روزے سے بچنے کیلئے سفر کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:316 | volume:0


Answer-2: روزے سے بچنے کیلئے سفر کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:260 | volume:0


Answer-3: روزے سے بچنے کیلئے سفر کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:293 | volume:0


Answer-4: روزے سے بچنے کیلئے سفر کرنا مکروہ ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:299 | volume:0



718

Category : روزہ

Question : جب مجنب شب ماہ رمضان میں سونے کے بعد بیدار ہوجائے تو کیا دوبارہ غسل کے بغیر سو سکتا ہے ؟


Answer-1: جب مجنب شب ماہ رمضان میں سونے کے بعد بیدار ہوجائے تو اگر وہ احتمال دے کہ آذان سے پہلے بیدار ہوجائے گا تو سو سکتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:302 | volume:0


Answer-2: جب مجنب شب ماہ رمضان میں سونے کے بعد بیدار ہوجائے تو اگر وہ احتمال دے کہ آذان سے پہلےغسل کیلئے بیدار ہوجائے گا تو سو سکتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:247 | volume:0


Answer-3: جب مجنب شب ماہ رمضان میں سونے کے بعد بیدار ہوجائے تو اگر اسکی اُٹھنے کی عادت نہ ہو تو احتیاط مستحب ہے کہ غسل سے پہلے نہ سوئے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:278 | volume:0


Answer-4: جب مجنب شب ماہ رمضان میں بیدار ہوجائے اگر اسے آذان صبح سے پہلے غسل کیلئے بیدار ہونے کا اطمینان نہ ہو تو احتیاط مستحب ہے کہ غسل سے پہلے نہ سوئے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:286 | volume:0



719

Category : نماز

Question : اگر کوئی شکار کیلئے سفر پر جائے تو نماز قصر ہوگی یا تمام ؟


Answer-1: اگر لہو و لعب اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جائے تو جاتے وقت نماز تمام پڑھے گا اور واپسی پر حدّ مسافت کی صورت میں نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:253 | volume:0


Answer-2: اگر لہو و لعب اور فقط تفر یح کیلئے شکار پر جائے تو نماز تمام پڑھے گا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:205 | volume:0


Answer-3: اگر لھو اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جائے تو جاتے وقت نماز تمام پڑھے گا اور واپسی پر حدّ مسافت کی صورت میں نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:227 | volume:0


Answer-4: اگر لہو و لعب اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جائے تو جاتے وقت نماز تمام پڑھے گا اور واپسی پر حدّ مسافت کی صورت میں نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:236 | volume:0



720

Category : نماز

Question : اگر کوئی شکار کیلئے سفر کرے تو کیا نماز قصر ہوگی یا تمام ہوگی ؟


Answer-1: اگر شکار حصول معاش کیلئے ہو اور سفر حدّ مسافت تک ہو تو نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:253 | volume:0


Answer-2: اگر شکار حصول معاش کیلئے ہو اور سفر حدّ مسافت تک ہو تو نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:205 | volume:0


Answer-3: اگر شکار حصول معاش کیلئے ہو اور سفر حدّ مسافت تک ہو تو نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:227 | volume:0


Answer-4: اگر شکار حصول معاش کیلئے ہو اور سفر حدّ مسافت تک ہو تو نماز قصر ہوگی ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:236 | volume:0



721

Category : طہارت

Question : کیا مسح کی جگہ کا مکمل خشک ہو نا ضروری ہے ؟


Answer-1: جی ہاں مسح کی جگہ اتنی خشک ہو کہ ہاتھوں کی تری اثر انداز ہو سکے کہ ہاتھوں کی تری سے مغلوب ہوجائے اور اگر اتنی تر ہو کہ ہاتھوں کی تری مسح کی جگہ پر اثر نہیں کر رہی ہے تو مسح باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:50 | volume:0


Answer-2: جی ہاں مسح کی جگہ اتنی خشک ہو کہ ہاتھوں کی تری اثر انداز ہو سکے کہ عرفاً کہا جائے کہ فقط ہاتھ کی تری ہے اور اگر اتنی تر ہو کہ ہاتھوں کی تری مسح کی جگہ پر اثر نہیں کر رہی ہے تو مسح باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:38 | volume:0


Answer-3: جی ہاں مسح کی جگہ اتنی خشک ہو کہ ہاتھوں کی تری اثر انداز ہو سکے کہ عرفاً کہا جائے کہ فقط ہاتھ کی تری ہے اور اگر اتنی تر ہو کہ ہاتھوں کی تری مسح کی جگہ پر اثر نہیں کر رہی ہے تو مسح باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:44 | volume:0


Answer-4: جی ہاں مسح کی جگہ اتنی خشک ہو کہ ہاتھوں کی تری اثر انداز ہو سکے کہ عرفاً کہا جائے کہ فقط ہاتھ کی تری ہے اور اگر اتنی تر ہو کہ ہاتھوں کی تری مسح کی جگہ پر اثر نہیں کر رہی ہے تو مسح باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:45 | volume:0



722

Category : نماز

Question : نماز جماعت نماز فرادی سے کتنا زیادہ ثواب رکھتی ہے ؟


Answer-1: نماز جماعت نماز فرادی سے 25 درجہ افضل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:260 | volume:0


Answer-2: نماز جماعت کی ہر رکعت کا ثواب اگر جماعت دو افراد پر مشتمل ہو تو 150 نماز کے برابر ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:218 | volume:0


Answer-3: نماز جماعت نماز فرادی سے 25 درجہ افضل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:244 | volume:0


Answer-4: نماز جماعت نماز فرادی سے 24 درجہ افضل ہے یعنی 25 نماز کے برابر ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:251 | volume:0



723

Category : نماز

Question : کیا نماز جماعت میں شرکت نہ کرنا گناہ ہے ؟


Answer-1: بے اعتنائی کرتے ہوئے نماز جماعت میں شرکت نہ کرنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:260 | volume:0


Answer-2: بے اعتنائی کرتے ہوئے نماز جماعت میں شرکت نہ کرنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:219 | volume:0


Answer-3: بے اعتنائی کرتے ہوئے نماز جماعت میں شرکت نہ کرنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:244 | volume:0


Answer-4: بے اعتنائی کرتے ہوئے نماز جماعت میں شرکت نہ کرنا جائز نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:252 | volume:0



724

Category : نماز

Question : امام جماعت اگر عصر کی نماز پڑھ رہا ہے تو کیا اس کے پیچھے ظہر کی نماز پڑھی جاسکتی ہے ؟


Answer-1: اگر امام جماعت یومیہ نماز پڑھ رہا ہے تو اس کی اقتداء میں کوئی بھی یومیہ نماز ادا کی جاسکتی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:261 | volume:0


Answer-2: اگر امام جماعت یومیہ نماز پڑھ رہا ہے تو اس کی اقتداء میں کوئی بھی یومیہ نماز ادا کی جاسکتی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:219 | volume:0


Answer-3: اگر امام جماعت یومیہ نماز پڑھ رہا ہے تو اس کی اقتداء میں کوئی بھی یومیہ نماز ادا کی جاسکتی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:245 | volume:0


Answer-4: اگر امام جماعت یومیہ نماز پڑھ رہا ہے تو اس کی اقتداء میں کوئی بھی یومیہ نماز ادا کی جاسکتی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:253 | volume:0



725

Category : نماز

Question : آیا لھو اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جانا حرام ہے ؟


Answer-1: لہو اور فقط تفر یح کیلئے شکار پر جانا حرام نہیں ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:245 | volume:0


Answer-2: لہو اور فقط تفر یح کیلئے شکار پر جانا حرام ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:تحریر الوسیلہ | Page:230 | volume:1


Answer-3: لہو اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جائے تو جانے میں سفر حرام ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:0 | volume:0


Answer-4: لہو اور فقط تفریح کیلئے شکار پر جائے تو جانے میں سفر حرام ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:236 | volume:0



726

Category : استحاضہ

Question : خونِ استحاضہ کی علامت بیان کردیں ؟


Answer-1: خونِ استحاضہ اکثر اوقات ٹھنڈا ، زرد رنگ کا اور جلن اور فشار کے بغیر نکلتا ہے اور گاڑھا بھی نہیں ہوتا لیکن ممکن ہے کہ کبھی سیاہ یا سرخ گرم اور گاڑھا ہو اور فشار اور جلن کے ساتھ نکلے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:71 | volume:0


Answer-2: خونِ استحاضہ اکثر اوقات ٹھنڈا ، زرد رنگ کا اور جلن اور فشار کے بغیر نکلتا ہے اور گاڑھا بھی نہیں ہوتا لیکن ممکن ہے کہ کبھی سیاہ یا سرخ گرم اور گاڑھا ہو اور فشار اور جلن کے ساتھ نکلے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:58 | volume:0


Answer-3: خونِ استحاضہ اکثر اوقات ٹھنڈا ، زرد رنگ کا اور جلن اور فشار کے بغیر نکلتا ہے اور گاڑھا بھی نہیں ہوتا لیکن ممکن ہے کہ کبھی سیاہ یا سرخ گرم اور گاڑھا ہو اور فشار اور جلن کے ساتھ نکلے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:67 | volume:0


Answer-4: خونِ استحاضہ اکثر اوقات ٹھنڈا ، زرد رنگ کا اور جلن اور فشار کے بغیر نکلتا ہے اور گاڑھا بھی نہیں ہوتا لیکن ممکن ہے کہ کبھی سیاہ یا سرخ گرم اور گاڑھا ہو اور فشار اور جلن کے ساتھ نکلے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:69 | volume:0



727

Category : پیوند کاری

Question : کیا مسلمان کے مرنے کے بعد اسکے بدن کے کسی حصے کو کاٹ کر کسی دوسرے مسلمان کو لگایا جا سکتا ہے ؟


Answer-1: مسلمان کے مرنے کے بعد اسکے بدن کا کوئی حصہ کسی دوسرے مسلمان کی جان بچانے کی خاطر لگایا جاسکتا ہے لیکن ایسی صورت میں کاٹنے والے پر دیت واجب ہوجائے گی ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:574 | volume:0


Answer-2: مسلمان کے مرنے کے بعد اسکے بدن کا کوئی حصہ جیسے آنکھ کسی دوسرے مسلمان کے نہیں لگا سکتے لیکن اگر اسکا زندہ بچنا اسی کاٹنے اور حصہ لگانے پر موقوف ہو تو جائز ہے لیکن دیت دینی پڑے گی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:468 | volume:0


Answer-3: مسلمان کے مرنے کے بعد اسکے بدن کا کوئی حصہ جیسے آنکھ کسی دوسرے مسلمان کے نہیں لگا سکتے لیکن اگر اسکا زندہ بچنا اسی کاٹنے اور حصہ لگانے پر موقوف ہو تو جائز ہے لیکن ایسی صورت میں عضو کاٹنے والے پر دیت ادا کرنا واجب ہوجائے گا۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:560 | volume:0


Answer-4: مسلمان کے مرنے کے بعد اسکے بدن کا کوئی حصہ جیسے آنکھ کسی دوسرے مسلمان کے نہیں لگا سکتے لیکن اگر اسکا زندہ بچنا اسی کاٹنے اور حصہ لگانے پر موقوف ہو تو جائز ہے لیکن ایسی صورت میں عضو کاٹنے والے پر دیت ادا کرنا واجب ہوجائے گا۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:575 | volume:0



728

Category : استحاضہ

Question : استحاضہ کی کتنی قسمیں ہیں ؟


Answer-1: استحاضہ کی تین قسمیں ہیں (1) قلیلہ (2) متوسطہ (3) کثیرہ

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:71 | volume:0


Answer-2: استحاضہ کی تین قسمیں ہیں (1) قلیلہ (2) متوسطہ (3) کثیرہ

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:59 | volume:0


Answer-3: استحاضہ کی تین قسمیں ہیں (1) قلیلہ (2) متوسطہ (3) کثیرہ

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:67 | volume:0


Answer-4: استحاضہ کی تین قسمیں ہیں (1) قلیلہ (2) متوسطہ (3) کثیرہ

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:70 | volume:0



729

Category : استحاضہ

Question : استحاضہ قلیلہ کسے کہتے ہیں ؟


Answer-1: استحاضہ قلیلہ یعنی خون صرف اس روئی کے اوپر والے حصے کو آلودہ کرے جو عورت رکھتی ہے اور اس روئی کے اندر سرائیت نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:71 | volume:0


Answer-2: استحاضہ قلیلہ یعنی خون اس روئی میں سوراخ نہ کرے اور دوسری طرف ظاہر نہ ہو جو عورتیں رکھتی ہیں ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:59 | volume:0


Answer-3: استحاضہ قلیلہ یعنی خون صرف اس روئی کے اوپر والے حصے کو آلودہ کرے جو عورت رکھتی ہے اور اس روئی کے اندر سرائیت نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:67 | volume:0


Answer-4: استحاضہ قلیلہ یعنی خون صرف اس روئی کے اوپر والے حصے کو آلودہ کرے جو عورت رکھتی ہے اور اس روئی کے اندر سرائیت نہ کرے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:70 | volume:0



730

Category : استحاضہ

Question : استحاضہ کثیرہ کیا ہے ؟


Answer-1: استحاضہ کثیرہ یہ ہے کہ خون روئی کو گھیر لے اور کپڑے تک پہنچ جائے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:71 | volume:0


Answer-2: استحاضہ کثیرہ یہ ہے کہ خون روئی سے کپڑے تک پہنچ جائے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:59 | volume:0


Answer-3: استحاضہ کثیرہ یہ ہے کہ خون روئی کو گھیر لے اور کپڑے تک پہنچ جائے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:67 | volume:0


Answer-4: استحاضہ کثیرہ یہ ہے کہ خون روئی کو گھیر لے اور کپڑے تک پہنچ جائے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:70 | volume:0



731

Category : طہارت

Question : اگر مسح کیلئے ہاتھوں کی رطوبت باقی نہ بچے تو کیا ہاتھ کو گیلا کرکے مسح کرسکتے ہیں ؟


Answer-1: اگر مسح کیلئے ہاتھوں کی رطوبت خشک ہوجائے تو چاہیے داڑھی سے تری لے باہر سے پانی لیکر مسح نہیں کر سکتا اور باقی اعضاء سے بھی لینا اور مسح کرنا اشکال رکھتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:47 | volume:0


Answer-2: اگر مسح کیلئے ہاتھوں کی رطوبت خشک ہوجائے تو وہ باہر سے تری نہیں لے سکتا بلکہ اسے اعضاء وضو سے پانی لیکر مسح کرنا ہوگا

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:38 | volume:0


Answer-3: اگر مسح کیلئے ہاتھوں کی رطوبت خشک ہوجائے تو چاہیے داڑھی سے تری لے باہر سے پانی لیکر مسح نہیں کر سکتا اور باقی اعضاء سے بھی لینا اور مسح کرنا اشکال رکھتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:44 | volume:0


Answer-4: اگر مسح کیلئے ہاتھوں کی رطوبت خشک ہوجائے تو چاہیے اُس داڑھی سے جو چہرے کی حد میں ہو تری لے باہر سے پانی لیکر مسح نہیں کر سکتا اور باقی اعضاء سے بھی لینا اور مسح کرنا اشکال رکھتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:45 | volume:0



732

Category : استحاضہ

Question : استحاضہ کثیرہ میں عورت کی ذمّہ داری کیا ہے ؟


Answer-1: استحاضہ کثیرہ میں احتیاط واجب کی بناء پر عورت ہر نماز کیلئے روئی اور پٹی تبدیل کرے یا اسکو دھوئے اور ایک غسل نماز صبح کیلئے اور ایک نماز ظہر و عصر کیلئے اور ایک نماز مغرب و عشا کیلئے بجا لانا ضروری ہے اور نمازِ ظہر و عصر اور مغرب و عشا ء کے درمیان فاصلہ نہ ڈالے ۔اور بھی تفصیل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:72 | volume:0


Answer-2: استحاضہ کثیرہ میں عورت استحاضہ متوسطہ کے اعمال کو بھی بجا لائے اور اسکے علاوہ ہر نماز کیلئے پٹی کو تبدیل کرے یا دھوئے اور ایک غسل نماز ظہر و عصر کیلئے اور ایک مغرب و عشاء کیلئے بجا لانا ضروری ہے اور نماز ظہر و عصر اور اسی طرح مغرب و عشاء کے درمیان فاصلہ نہ ڈالے ۔ اور بھی تفصیل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:59 | volume:0


Answer-3: استحاضہ کثیرہ میں عورت اسحاضہ متوسطہ کے اعمال کو بھی بجا لائے اور اسکے علاوہ احتیاط واجب کی بناء پر ہر نماز کیلئے پٹی کو تبدیل کرے یا دھوئے اور ایک غسل نماز ظہر و عصر کیلئے اور ایک نماز مغرب و عشاء کیلئے بجا لانا ضروری ہے اور نماز ظہر و عصر اسی طرح مغرب و عشاء کے درمیان فاصلہ نہ ڈالے۔ اور بھی تفصیل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:67 | volume:0


Answer-4: استحاضہ کثیرہ میں عورت استحا ضہ متوسطہ کے اعمال کو بھی بجا لائے اور اسکے علاوہ احتیاط واجب کی بناء پر ہر نماز کیلئے پٹی کو تبدیل کرے یا دھوئے اور ایک غسل نماز ظہر و عصر کیلئے اور ایک نماز مغرب و عشاء کیلئے بجا لانا ضروری ہے اور نماز ظہر و عصر اسی طرح مغرب و عشاء کے درمیان فاصلہ نہ ڈالے۔ اور بھی تفصیل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:70 | volume:0



733

Category : استحاضہ

Question : استحاضہ متوسطہ میں وضو پہلے کرے گی یا غسل ؟


Answer-1: استحاضہ متوسطہ میں پہلے غسل کرے پھر وضو کرے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:73 | volume:0


Answer-2: استحاضہ متوسطہ میں عورت کی مرضی ہے غسل پہلے کرے یا وضو لیکن بہتر یہ ہے کہ پہلے وضو کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:59 | volume:0


Answer-3: استحاضہ متوسطہ میں عورت کی مرضی ہے غسل پہلے کرے یا وضو لیکن بہتر یہ ہے کہ پہلے وضو کرے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:68 | volume:0


Answer-4: استحاضہ متوسطہ میں عورت کی مرضی ہے غسل پہلے کرے یا وضو لیکن بہتر یہ ہے کہ پہلے وضو کرے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:71 | volume:0



734

Category : عاریہ

Question : اگر کوئی چیز عاریۃً لے مثلاً استری تو کیا وہ کسی اور کو عاریۃً دے سکتا ہے ؟


Answer-1: عاریہ (استعمال کرنے کیلئے ) پر لی ہوئی چیز صاحب مال کی اجازت کے بغیر کسی اور کو عاریہ کے طور پر نہیں دی جاسکتی ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:455 | volume:0


Answer-2: عاریہ (استعمال کرنے کیلئے ) پر لی ہوئی چیز صاحب مال کی اجازت کے بغیر کسی اور کو عاریہ کے طور پر نہیں دی جاسکتی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:372 | volume:0


Answer-3: عاریہ (استعمال کرنے کیلئے ) پر لی ہوئی چیز صاحب مال کی اجازت کے بغیر کسی اور کو عاریہ کے طور پر نہیں دی جاسکتی ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:422 | volume:0


Answer-4: عاریہ (استعمال کرنے کیلئے ) پر لی ہوئی چیز صاحب مال کی اجازت کے بغیر کسی اور کو عاریہ کے طور پر نہیں دی جاسکتی ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:453 | volume:0



735

Category : عاریہ

Question : اگر سونے کا زیور عاریۃً مالک سے لے اور کہے کہ اگر تلف ہوجائے تو میں ذمہ دار نہیں ہوگا ؟


Answer-1: عاریۃً لیتے وقت مالک سے کہے کہ اگر تلف ہوجائے تو میں ذمہ دار نہیں ہوں گا تو تلف کی صورت میں ذمہ دار نہیں ہو گا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:455 | volume:0


Answer-2: عاریۃً لیتے وقت مالک سے کہے کہ اگر تلف ہوجائے تو میں ذمہ دار نہیں ہوں گا تو تلف کی صورت میں ذمہ دار نہیں ہو گا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:372 | volume:0


Answer-3: عاریۃً لیتے وقت مالک سے کہے کہ اگر تلف ہوجائے تو میں ذمہ دار نہیں ہوں گا تو تلف کی صورت میں ذمہ دار نہیں ہو گا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:421 | volume:0


Answer-4: عاریۃً لیتے وقت مالک سے کہے کہ اگر تلف ہوجائے تو میں ذمہ دار نہیں ہوں گا تو تلف کی صورت میں ذمہ دار نہیں ہو گا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:452 | volume:0



736

Category : عاریہ

Question : اگر کوئی سونے کا زیور کسی سے عاریۃً لے اور وہ تلف ہوجائے تو ذمہ دار ہوگا ؟


Answer-1: اگر سونے یا چاندی کا زیور عاریۃً لے اور وہ استعمال میں کوتاہی کی وجہ سے تلف ہوجائے تو ذمہ دار ہو اسکا عوض دینا ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:454 | volume:0


Answer-2: سونے یا چاندی کا زیور عاریۃً لے اور وہ استعمال میں کوتاہی کی وجہ سے تلف ہوجائے تو ذمہ دار ہو اسکا عوض دینا ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:371 | volume:0


Answer-3: سونے یا چاندی کا زیور عاریۃً لے اور وہ استعمال میں کوتاہی کی وجہ سے تلف ہوجائے تو ذمہ دار ہو اسکا عوض دینا ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:421 | volume:0


Answer-4: اگر سونے یا چاندی کا زیور عاریۃً لے اور وہ استعمال میں کوتاہی کی وجہ سے تلف ہوجائے تو ذمہ دار ہو اسکا عوض دینا ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:451 | volume:0



737

Category : عاریہ

Question : اگر پڑوسی سے عاریۃً استری لے اور وہ بغیر کوتاہی وغیرہ کے خراب ہوجائے تو کیا ضامن ہوگا ؟


Answer-1: اگر مالک نے عاریۃً دیتے وقت کہا ہو کہ اگر استری خراب ہوجائے تو تم ذمہ دار ہوگے تو ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:منھاج الصالحین | Page:207 | volume:2


Answer-2: اگر مالک نے عاریۃً دیتے وقت کہا ہو کہ اگر استری خراب ہوجائے تو تم ذمہ دار ہوگے تو ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:371 | volume:0


Answer-3: اگر مالک نے عاریۃً دیتے وقت کہا ہو کہ اگر میری استری خراب ہوجائے تو تم ذمہ دار ہوگے تو ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:421 | volume:0


Answer-4: اگر مالک نے عاریۃً دیتے وقت کہا ہو کہ اگر استری خراب ہوجائے تو تم ذمہ دار ہوگے تو ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:451 | volume:0



738

Category : عاریہ

Question : آیا چیز کو عاریۃً لینے کیلئے صیغہ پڑھنا ضروری ہے ؟


Answer-1: عاریۃً دینے اور لینے کیلئے صیغہ پڑھنا ضروری نہیں ہے بلکہ عاریہ کے قصد سے لینا یا دینا کافی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:454 | volume:0


Answer-2: عاریۃً دینے اور لینے کیلئے صیغہ پڑھنا ضروری نہیں ہے بلکہ عاریہ کے قصد سے لینا یا دینا کافی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:371 | volume:0


Answer-3: عاریۃً دینے اور لینے کیلئے صیغہ پڑھنا ضروری نہیں ہے بلکہ عاریہ کے قصد سے لینا یا دینا کافی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:420 | volume:0


Answer-4: عاریۃً دینے اور لینے کیلئے صیغہ پڑھنا ضروری نہیں ہے بلکہ عاریہ کے قصد سے لینا یا دینا کافی ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:451 | volume:0



739

Category : عاریہ

Question : اگر کوئی چیز عاریۃ ً لے مثلا ً استری تو کیا وہ کسی اور کو کرایہ پر دے سکتا ہے ؟


Answer-1: عاریہ پر لی ہوئی چیز کو صاحب مال کی اجازت کے بغیر کرایہ پر کسی اور کو نہیں دے سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:455 | volume:0


Answer-2: عاریہ پر لی ہوئی چیز کو صاحب مال کی اجازت کے بغیر کرایہ پر کسی اور کو نہیں دے سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:372 | volume:0


Answer-3: عاریہ پر لی ہوئی چیز کو صاحب مال کی اجازت کے بغیر کرایہ پر کسی اور کو نہیں دے سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:422 | volume:0


Answer-4: عاریہ پر لی ہوئی چیز کو صاحب مال کی اجازت کے بغیر کرایہ پر کسی اور کو نہیں دے سکتے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:453 | volume:0



740

Category : کرایہ کے احکام

Question : مکان کرایہ پر دینے کیلئے کرایہ کے حوالے سے کیا ذمہ داری ہے ؟


Answer-1: کرائے پر مکان دینے کیلئے مکان کا کرایہ معیّن ہونا چاہیے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:411 | volume:0


Answer-2: کرائے پر مکان دینے کیلئے مکان کا کرایہ معیّن ہونا چاہیے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:339 | volume:0


Answer-3: کرائے پر مکان دینے کیلئے مکان کا کرایہ معیّن ہونا چاہیے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:383 | volume:0


Answer-4: کرائے پر مکان دینے کیلئے مکان کا کرایہ معیّن ہونا چاہیے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:405 | volume:0



741

Category : عاریہ

Question : عاریہ کسے کہتے ہیں ؟


Answer-1: اگر انسان کسی کو کوئی چیز استعمال کیلئے دے اور اسکے عوض کوئی چیز بھی نہ لے تو اسے عاریہ کہتے ہیں جیسے ایک پڑوسی دوسرے پڑوسی کو استعمال کیلئے پلیٹیں دے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:454 | volume:0


Answer-2: اگر انسان کسی کو کوئی چیز استعمال کیلئے دے اور اسکے عوض کوئی چیز بھی نہ لے تو اسے عاریہ کہتے ہیں جیسے ایک پڑوسی دوسرے پڑوسی کو استعمال کیلئے پلیٹیں دے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:371 | volume:0


Answer-3: اگر انسان کسی کو کوئی چیز استعمال کیلئے دے اور اسکے عوض کوئی چیز بھی نہ لے تو اسے عاریہ کہتے ہیں جیسے ایک پڑوسی دوسرے پڑوسی کو استعمال کیلئے پلیٹیں دے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:420 | volume:0


Answer-4: اگر انسان کسی کو کوئی چیز استعمال کیلئے دے اور اسکے عوض کوئی چیز بھی نہ لے تو اسے عاریہ کہتے ہیں جیسے ایک پڑوسی دوسرے پڑوسی کو استعمال کیلئے پلیٹیں دے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:451 | volume:0



742

Category : نجاست

Question : کیا سڑک پر چلنے والی گاڑی کا ٹائر پاک ہوتا ہے یا نہیں ؟


Answer-1: سڑک پر چلنے سے گاڑی کے ٹائر اگر پہلے نجس تھے اور اب شک ہو رہا ہے تو نجس سمجھے جائیں گے اگر پہلے پاک تھے اب شک ہو رہا ہے تو پاک سمجھے جائیں گے اگر پہلی حالت معلوم نہ ہو تو پاک سمجھے جائیں گے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:25 | volume:0


Answer-2: سڑک پر چلنے سے گاڑی کے ٹائر اگر پہلے نجس تھے اور اب شک ہو رہا ہے تو نجس سمجھے جائیں گے اگر پہلے پاک تھے اب شک ہو رہا ہے تو پاک سمجھے جائیں گے اگر پہلی حالت معلوم نہ ہو تو پاک سمجھے جائیں گے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:18 | volume:0


Answer-3: سڑک پر چلنے سے گاڑی کے ٹائر اگر پہلے نجس تھے اور اب شک ہو رہا ہے تو نجس سمجھے جائیں گے اگر پہلے پاک تھے اب شک ہو رہا ہے تو پاک سمجھے جائیں گے اگر پہلی حالت معلوم نہ ہو تو پاک سمجھے جائیں گے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:21 | volume:0


Answer-4: سڑک پر چلنے سے گاڑی کے ٹائر اگر پہلے نجس تھے اور اب شک ہو رہا ہے تو نجس سمجھے جائیں گے اگر پہلے پاک تھے اب شک ہو رہا ہے تو پاک سمجھے جائیں گے اگر پہلی حالت معلوم نہ ہو تو پاک سمجھے جائیں گے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:23 | volume:0



743

Category : کرایہ کے احکام

Question : اگر درزی کو کپڑا سلنے کیلئے دے اور کپڑا تلف ہوجائے تو کیا حکم ہو گا ؟


Answer-1: درزی کپڑے سینے میں بے احتیاطی یا حفاظت میں کوتاہی نہ کرے اور وہ ضائع ہوجائے تو ذمہ دار نہیں ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:416 | volume:0


Answer-2: درزی کپڑے سینے میں بے احتیاطی یا حفاظت میں کوتاہی نہ کرے اور وہ ضائع ہوجائے تو ذمہ دار نہیں ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:340 | volume:0


Answer-3: درزی کپڑے سینے میں بے احتیاطی یا حفاظت میں کوتاہی نہ کرے اور وہ ضائع ہوجائے تو ذمہ دار نہیں ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:384 | volume:0


Answer-4: درزی کپڑے سینے میں بے احتیاطی یا حفاظت میں کوتاہی نہ کرے اور وہ ضائع ہوجائے تو ذمہ دار نہیں ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:406 | volume:0



744

Category : کرایہ کے احکام

Question : گاڑی کو شراب منتقل کرنے کیلئے کرایہ پر دینے کا کیا حکم ہے ؟


Answer-1: شراب منتقل کرنے کیلئے گاڑی کرایہ پر دینا صحیح نہیں ہے اور معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:413 | volume:0


Answer-2: شراب منتقل کرنے کیلئے گاڑی کرایہ پر دینا صحیح نہیں ہے اور معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:338 | volume:0


Answer-3: شراب منتقل کرنے کیلئے گاڑی کرایہ پر دینا صحیح نہیں ہے اور معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:382 | volume:0


Answer-4: شراب منتقل کرنے کیلئے گاڑی کرایہ پر دینا صحیح نہیں ہے اور معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:404 | volume:0



745

Category : کرایہ کے احکام

Question : اگر زمین کو زراعت کیلئے کرایہ پر دے اور اس کا کرایہ اسی زراعت کا ماحصل سے قرار دے تو کیا حکم ہے ؟


Answer-1: اگر زمین کو زراعت کیلئے کرایہ پر دی جائے اور کرایہ اسی زمین کا ماحصل زراعت کو قرار دے جو اسوقت موجود نہیں ہے ،تو معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:415 | volume:0


Answer-2: اگر زمین کو جو یا گندم کی زراعت کیلئے کرایہ پر دی جائے اور کرایہ اسی زمین کی جو یا گندم کو قرار دے جو اسوقت موجود نہیں ہے ،تو معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:339 | volume:0


Answer-3: اگر زمین کو زراعت کیلئے کرایہ پر دی جائے اور کرایہ اسی زمین کا ماحصل زراعت کو قرار دے جو اسوقت موجود نہیں ہے ،تو معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:383 | volume:0


Answer-4: اگر زمین کو زراعت کیلئے کرایہ پر دی جائے اور کرایہ اسی زمین کا ماحصل زراعت کو قرار دے جو اسوقت موجود نہیں ہے ،تو معاملہ باطل ہے ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:405 | volume:0



746

Category : کرایہ کے احکام

Question : اگر ڈاکٹر مریض کو دوائی لکھ کر دے اور مریض مر جائے تو کیا حکم ہوگا ؟


Answer-1: اگر ڈاکٹر مریض کو دوائی لکھ کر دے اور مریض اسکے استعمال سے مر جائے تو ڈاکٹر ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:توضیح المسائل | Page:416 | volume:0


Answer-2: اگر ڈاکٹر اپنے ہاتھ سے مریض کو دوا دے اور معالجہ میں خطا کرے اور مریض اسکے استعمال سے مر جائے تو ڈاکٹر ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید روح اللہ موسوی خمینی | Book:توضیح المسائل | Page:341 | volume:0


Answer-3: اگر ڈاکٹر اپنے ہاتھ سے مریض کو دوا دے اور معالجہ میں خطا کرے اور مریض اسکے استعمال سے مر جائے تو ڈاکٹر ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ مرحوم سید محمد ابو القاسم الخوئی | Book:توضیح المسائل | Page:385 | volume:0


Answer-4: اگر ڈاکٹر اپنے ہاتھ سے مریض کو دوا دے اور معالجہ میں خطا کرے اور مریض اسکے استعمال سے مر جائے تو ڈاکٹر ضامن ہوگا ۔

Scholar:آیت اللہ شیخ حسین وحید خراسانی | Book:توضیح المسائل | Page:407 | volume:0



747

Category : نامعلوم

Question : Kia mn monthly khums ada kr skti hon? Jese 3th qist ada krne p ek qist ka khums bhi


Answer-1: ماہانہ خمس ادا کیا جا سکتا ہے ۔

Scholar:آیت اللہ سید علی حسینی سیستانی | Book:نا معلوم | Page:0 | volume:0